September 24, 2017
You can use WP menu builder to build menus

بارسلونا(بی بی سی اپ ڈیٹ)کم چربی والی غذائی جلد موت کے خطرے میں اضافے کا باعث بنتی ہیں۔یہ دعویٰ کینیڈا میں ہونے والی ایک طبی تحقیق میں سامنے آیا۔میک ماسٹر یونیورسٹی کی اس تحقیق کے دوران دنیا بھر میں ڈیڑھ لاکھ کے قریب افراد کا جائزہ لینے کے بعد دعویٰ کیا گیا کہ جو لوگ کم چربی کھاتے ہیں، ان کی شرح اموات زیادہ ہوتی ہے۔اس تحقیق کو دنیا کی سب سے بڑی ہارٹ کانفرنس کے دوران پیش کیا گیا اور دہائیوں سے دیئے جانے والے اس غذائی مشورے کو چیلنج کیا گیا جس میں لوگوں کو چربی کم کھانے کا کہا گیا۔تحقیق کے مطابق درحقیقت چربی ممکنہ طور پر انسانی صحت کے لیے فائدہ مند اثرات مرتب کرتی ہے۔تحقیق میں بتایا گیا کہ جو لوگ کم چربی کھانے کے عادی ہوتے ہیں، ان میں نوجوانی میں موت کا خطرہ 23 فیصد زیادہ ہوتا ہے۔تحقیق کے مطابق کم چکنی غذائیں کھانے والے افراد اہم غذائی اجزاءسے محروم رہتے ہیں جبکہ کاربوہائیڈریٹس جیسے سافٹ ڈرنکس میں موجود ریفائن چینی اور جنک فوڈ وغیرہ پسند کرنے والوں میں جلد موت کا خطرہ 28 فیصد زیادہ ہوتا ہے۔محققین کا کہنا تھا کہ دہائیوں سے غذائی گائیڈلائنز میں پوری توجہ کم چربی اور سچورٹیڈ فیٹی ایسڈز کے استعمال پر مرکوز کی گئی، حالانکہ جسم کو چربی کی ضرورت ہوتی ہے جو کہ وٹامنز سے بھرپور ہوتی ہے جبکہ ضروری ایسڈز سے بھی لیس ہوتی ہے۔ان کا کہنا تھا کہ جب چربی کی مقدار کو انتہائی کم کردیا جاتا ہے تو اس سے جسم کے لیے درکار ضروری منرلز کی سطح متاثر ہوتی ہے۔انہوں نے کہا کہ لوگ بہت زیادہ تو چربی نہ کھائیں مگر اسے بہت کم بھی استعمال نہ کریں بلکہ متوازن حد تک غذا کا حصہ بنائیں۔لگ بھگ ساڑھے سات سال تک جاری رہنے والی تحقیق کے دوران یہ دریافت کیا گیا کہ کم چربی کا استعمال خون کی شریانوں سے متعلق امراض جیسے امراض قلب، فالج، بلڈ پریشر یا دیگر کا خطرہ بڑھا دیتا ہے۔یہ بتانے کی ضرورت نہیں کہ سچورٹیڈ فیٹ عام طور پر مکھن، پنیر اور سرخ گوشت، کلیجی وغیرہ میں ملتا ہے۔اس تحقیق کے نتائج طبی جریدے لانسیٹ میڈیکل جرنل میں شائع ہوئے۔

No Comments

You must be logged in to post a comment.